સંસ્કૃત  પાઠશાળામાં  ઉર્દુ ભણવા મળ્યું .

             હું  ઈંગ્લીશ વિના  ગુજરાતી 7 ધોરણ ભણી  ઉતર્યો  . હું ભણવામાં હોશિયાર વિદ્યાર્થી હતો  . ભણવું મને ગમતું હતું   પણ મારા 12 રૂપિયા  માસિક પગારદાર  બાપને  મને આગળ ભણાવવાની ત્રેવડ નોતી. પછી મને બીલખા  શ્રીમન્નથુરામ  શર્માના આશ્રમમાં  સંસ્કૃત  ભણવા  માટે દાખલ કર્યો  .  અહી  જમવાની અને રહેવાની અને ભણવાની  મફત  સગવડ હતી   . આશ્રમમાં  કાયમ રહેતા  ટ્રસ્ટી  માણેકલાલ  ચંદારાણા ને મારા બાપા  ઓળખાતા હતા  . આશ્રમમાં મને દાખલ કરતી વખતે  બાપાએ વાત કરીકે મારા દીકરાને  કથા  વાર્તા  ,   લગ્ન  ,  શ્રાદ્ધ  , વગેરે યજમાન વૃતિ કરીને  રોટલા રળી ખાવાનું ભણવાનું નથી  . આવો ધંધો  કરવાનું  છોડીને  મારા દાદા કાનજી બાપા  બાબી મુસલમાન દરબારની નોકરી કરવા આવેલા અને હું પણ  દરબારની નોકરી કરું છું  ,પણ મારા દીકરાને  સંસ્કૃત સાહિત્ય ભણવાનું છે  .  માણેકલાલ બાપા કબુલ થયા  . અને હું  બિહારના  મૈથીલ  બ્રાહ્મણ  રઘુનન્દન ઝા  કે  જેને   ન્યાય વ્યાકરણના   આચાર્યની  ડીગ્રી હતી  .   અને હું સંસ્કૃત  અલ્ફાબેટ    आईरूण  , શીખવા માંડ્યો  ,

     આશ્રમમાં  કોઈ બી જાણ્યો  અજાણ્યો શખ્સ ત્રણ  દિવસ માટે  માનવંતા  મહેમાન તરીકે રહી  શકે એવો કાયદો હતો. એક વખત એક પંજાબનો ઉર્દુ સંપ્રદાયનો સાધુ આવ્યો  .  મને સાધુ સંત  કથાકારો ચારણ ભાટ જેવા  લોકો પાસેથી  કશુંક જાણવાની હમેશા જીજ્ઞાસા વૃતિ રહી છે. હું સાધુ પાસે ગયો . સાધુ આ વખતે એક ઉર્દુ ચોપડી વાંચી રહ્યો હતો. આ વખતે  મારી એવી માન્યતા હતી કે  ઉર્દુ ભાષા એ  મુસલમાન  ધર્મ પાળનારાઓની ભાષા છે  . મેં સાધુને પૂછ્યું તમે સાધુ થઈને  ઉર્દુ ચોપડી શામાટે વાંચો છો  ?
સાધુ બોલ્યો  હું  બ્રહ્માનાન્દ્ના ભજનોની ચોપડી વાંચું છું , અને વધુમાં તે બોલ્યો ઉર્દુ એ કોઈ જાતી કે ધર્મની ભાષા નથી  . અને આ ભાષા  ભારતમાં  મુસલમાન  બાદશાહોના વખતમાં  નવી જન્મેલી ભાષા છે એ જમાનામાં  દિલ્હી અને ઉત્તર ભારતમાં એક ખડી  ભાષા તરીકે ઓળખાતી  ભાષા લોકો બોલતા હતા  . ઉર્દુમાં  ભારતની ઘણી ભાષાઓના શબ્દો તેમજ  તુર્કી ભાષાના શબ્દો પણ છે  અને અપ્ભ્રુંશ  થએલા  ઈંગ્લીશ શબ્દો  પણ છે પણ  વધારે શબ્દો ફારસી અને અરબી ભાષાના છે  . ઉર્દુ શબ્દ એ તુર્કી ભાષાનો છે કે જેનો અર્થ લશ્કરની છાવણી  અથવા   છાવણીનો બજાર  એવો થાય છે  .

     મને પહેલેથીજ  ઘણા લોકોની જેમ  પોતાનામાં કૈક  વિશેષતા છે  એવું કરી બતાવવાનો શોખ. આ કારણે  હું મારા ખુલ્લા હાથે કોબ્રા કાળા વીંછી  પકડી લઉં છું અને મારા શરીરે ફરવા દઉં છું   . અને મારા મોઢાંમાં  પણ મૂકી શકું છું   . ભરો ભમરી મધમાખીને પણ પકડી ને મારા મુખમાં   મૂકી શકું છું.

     સાધુની વાત જાણ્યા પછી  મને  એમ થયું કે આવી લીટા લીટા વાળી ભાષા  મને આવડતી હોય તો મિત્રો આગળ મારો વટ પડે  મેં સાધુને પૂછ્યું તું મને ઉર્દુ લખતા વાંચતા  શીખવ ખરો  , સાધુ બોલ્યો  હા પણ  એ માટે મને  ફક્ત  સાધારણ  લખતા વાંચતા  શીખવવા માટે  ઓછામાં ઓછો એક મહિનાનો સમય  જોઈએ  અને એટલો લાંબો વખત હું  અહી રહી નો શકું।  છતાં હું આશ્રમના સત્તા વાળાઓને  પુ છી જોઇશ  જો મને એ એક મહિનો અહી રહેવા દ્યે  તો હું તુને બહુજ  મામુલી લખતા વાંચતા શીખવી દઉં

      સાધુએ  આશ્રમના વ્યવસ્થાપક  ત્રિભોવન બાપાને પૂછ્યું  . ત્રિભોવન બાપાએ  કાયમ આશ્રમમાં રહેતા  બ્રહ્મચારી ટ્રસ્ટી  પ્રકાશજી બાપુને પૂછ્યું   પ્રકાશજી આ દેશીંગા બાંટવા  ઉર્દુ શીખવા માગે છે.  ગોરા અધિકારી પ્રાંત સાહેબે  જ્યારે તેઓ આશ્રમનું મુલાકાતે આવેલા ત્યારે  મને પૂછ્યું તમે  ક્યા ગામના છો મેં કીધું હું દેશીંગા નો રહેવાસી છું  ત્યારે પ્રાંત સાહેબે  પ્રશ્ન કર્યો  . દેશીંગા  બાંટવા ? બસ ત્યારથી આશ્રમમાં મારું નામ દેશીંગા  બાંટવા પડી ગએલું  ;

       અને બાપુ હું સ્નાન સન્ધ્યા પ્રાણાયામ  કરીને સાધુ ગુરુ પાસે  ઉર્દુ ભણવા બેઠો  અલ્ફ ,બે , પે। તે  તે।  ટે સે   .  અને પછી હું  બ્રીટીશ આર્મીમાં ભરતી થયો અને ઉર્દુ વધુ શીખ્યો  અને પછી ભૂલ્યો પણ ખરો કેમકે મારી નોકરીમાં મને  સમય બહુ નો મળતો  પણ પછી અમેરિકા આવ્યા પંછી મને સમય મળ્યો  મેં ઉર્દુ પ્રેકટીશ વધારી  અને  પછી તો જેમ  હળદળ  નો ગાંથીઓ મળે અને ગાંધી  કહેવડાવવા મંડે  એમ હું ઉર્દુ ભાષામાં કવિતા  બનાવવા મંડી  ગયો જેમાં  સુર શરાબ  માશુકની શેર શાયરી વધુ બનાવી છે  ભજન પણ  બનાવ્યા છે

     લ્યો આ  જે મારા મનમાં હતું તે  તમારી આગળ ખુલ્લામ ખુલા કહી દીધું.  હું ઉર્દુ મેગેજીન પણ મગાવવા મંડી ગયો  જે મને મફતમાં મળતા હતાં પણ  સુરેશ જાનીની જેમ

मेरी खातिर ख्वाह  बेगम  उर्दूके खिलाफ थी  तो हमने उर्दू मेगेज़ीन मनवाना बांध कर दिया   तो ये बाते आपके आगे आश्करा करदिया   .

खुद हाफ़िज़

One response to “સંસ્કૃત  પાઠશાળામાં  ઉર્દુ ભણવા મળ્યું .

  1. pragnaju September 8, 2015 at 10:06 am

    સંસ્કૃત ભારતની ઘણી લિપિઓમાં લખાતી આવી છે, પરંતુ મૂળભુત રૂપે તે દેવનાગરી લિપિ સાથે જોડાયેલી ભાષા છે. દેવનાગરી લિપિ મૂળ તો સંસ્કૃત માટે જ બની છે, એટલે એમાં દરેક ચિન્હ માટે એક અને માત્ર એક જ ધ્વનિ છે. દેવનાગરીમાં ૧૨ સ્વર અને ૩૪ વ્યંજન છે. દેવનાગરીમાંથી રોમન લિપિ માં લિપ્યાંતરણ માટે બે પદ્ધતિઓ પ્રચલિત છે: સંકૃત એક બહિર્મુખી- भाईबजरङ्गी इति चलचित्रम् अपश्यम्। भारतः स्वर्गः भविष्यति यदि सर्वे जनाः अहं हनुमत्भक्तः अस्मि कदापि असत्यं न वदामि इति – भविष्यन्ति।
    واجدلي شاہ کا وقت تھا. لکھنؤ عیش و آرام کے رنگ میں ڈوبا ہوا تھا. کوئی رقص اور ترانہ کی مجلس سجاتا تھا تو کوئی افیون کی پينك ہی کے مزے لیتا تھا. حکومت-شعبہ میں، ادب کے علاقے میں، سماجی نظام میں، فن مہارت، صنعت دھندوں میں، غذا-وہار میں ہر جگہ عیش و آرام کی پھیلی ہو رہی تھی. ملازم موضوعات ہوس میں، كوگ محبت اور وره ​​کے بیان میں، کاریگر كلابتتو اور چکن بنانے میں، تاجر سرمے میں، خوشبو، مسسي اور ابٹن کا روزگار کرنے میں ملوث تھے.

    دنیا میں کیا ہو رہا ہے اس کی کسی کو خبر نہ تھی. بٹیر لڑ رہے ہیں. تيترو کی لڑائی کے لئے متعدد بدی جا رہی ہے. کہیں ہموار بچھی ہوئی ہے. پو بارہ کا شور مچا ہوا ہے. کہیں شطرنج سخت ء چھڑا ہوا ہے. بادشاہ سے لے کر رنک تک اسی دھن میں مست تھے. شطرنج، تاش، گجيپھا کھیلنے سے عقل شدید ہوتی ہے، خیالات طاقت کی ترقی ہوتا ہے، پیچیدہ مسائل کو حل کرنے کی عادت پڑتی ہے، یہ دلیلیں زور دینے کے ساتھ پیش کی جاتی تھیں.

    (اس فرقے کے لوگوں سے دنیا اب بھی خالی نہیں ہے.) لہذا اگر مرزا سجاد علی اور میر روشن علی اپنا زیادہ تر وقت عقل-شدید کرنے میں بسر کرتے تھے تو کسی ویچارشیل مرد کو کیا اعتراض ہو سکتی تھی؟ دونوں کے پاس موروثی جاگيرے تھی، رزق کی کوئی فکر نہ تھی. گھر میں بیٹھے چكھوتيا کرتے. آخر اور کرتے ہی کیا؟

    صبح دور دونوں دوست ناشتہ کرکے بساط بچھا کر بیٹھ جاتے، مہرے سج جاتے اور جنگ کے داوپےچ ہونے لگتے تھے. پھر خبر نہ ہوتی تھی کہ کب دوپہر ہوئی، کب تیسرا پہر، کب شام! گھر کے اندر سے بار بار بلاوا آتا تھا-‘كھانا تیار ہے. ‘یہاں سے جواب ملتا،’ چلو آتے ہیں، دستركھوان بچھاو. ‘یہاں تک کہ شیف مجبور ہوکر کمرے ہی میں کھانا رکھ جاتا تھا اور دونوں دوست دونوں کام ساتھ -کے ساتھ کرتے تھے مرزا سججادلي کے گھر میں کوئی بڑا-بوڑھا نہ تھا، تو ان کے دیوان خانے میں باجيا ہوتی تھیں؛ مگر یہ بات نہ تھی کہ مرزا کے گھر کے اور لوگ اس کے اس رویے سے خوش ہوں. گھروالی کا تو کہنا ہی کیا، محلے والے گھر کے نوکر تک مسلسل میں Spiteful تبصرے کیا کرتے تھے-‘بڑي منحوس کھیل ہے. گھر کو تباہ کر دیتا ہے. خدا نہ کرے کسی کو اس کی چاٹ پڑے. ‘

    ایک دن بیگم صاحبہ کے سر میں درد ہونے لگا. انہوں نے لونڈی سے کہا، ‘جاکر مرزا صاحب کو بلا لا. کسی حکیم کے یہاں سے ادویات لائیں. ‘لونڈی گئی تو مرزا نے کہا،’ چل اب آتے ہیں. بیگم صاحبہ کا مزاج گرم تھا. اتنی تسلی مل کہ ان کے سر میں درد ہو اور شوہر شطرنج ادا کرتا رہے. چہرہ سرخ ہو گیا. لونڈی سے کہا، ‘جاکر کہہ، ابھی چلئے نہیں تو وہ آپ ہی حکیم کے یہاں چلی جائیں گی.’ مرزا جی بڑی دلچسپ بازی کھیل رہے تھے. دو ہی قسطوں میں میر صاحب کی شکست ہوئی جاتی تھی، جھجھلاكر بولے، ‘کیا ایسا دم لبوں پر ہے؟ ذرا صبر نہیں ہوتا؟ ‘

    مير- ‘جی ہاں، جاکر سن ہی آئیے نہ.’ مرجا- ‘جی ہاں، چلا کیوں نہ جاؤں. دو قسطوں میں آپ کی شکست ہوتی ہے. ‘مير-‘ جناب، اس بھروسے نہ رهےگا. وہ چال سوچی ہے کہ آپ مہرے دھرے رہیں، اور شکست ہو جائے. پر جائیے، اگر سن آئیے، کیوں كھوامه-خواہ ان کا دل دكھاےگا؟ مرجا- ‘اسی بات پر شکست کر کے ہی جاؤں گا.’ مير- ‘میں كھےلوگا ہی نہیں. آپ جاکر سن آئیے. ‘مرجا-‘ ارے یار، جانا ہی پڑے گا حکیم کے یہاں. سر درد خاک نہیں ہے، مجھے پریشان کرنے کا بہانہ ہے. ‘میر -‘ کچھ بھی ہو، اس کی خاطر تو کرنی ہی پڑے گی. ‘مرجا-‘ اچھا، ایک چال اور چل لوں. ‘مير-‘ ہرگز نہیں، جب تک آپ سن نہ اوےگے، میں سیل میں ہاتھ نہ لگاؤں گا.

    مرزا صاحب مجبور ہوکر اندر گئے تو بیگم صاحبہ نے تيوريا بدل، لیکن کراہتے ہوئے کہا، ‘تمہیں نگوڑي شطرنج اتنی پیاری ہے .. … نوج کوئی تم جیسا آدمی ہو!’ مرجا- ‘کیا کہوں، میر صاحب مانتے ہی نہ تھے. بڑی مشکل سے پیچھا چھڑا کر آیا ہوں. ‘بےگم-‘ کیا جیسے وہ خود نكھٹٹو ہیں، ویسے ہی سب کو سمجھتے ہیں؟ ان کے بھی بال بچے ہیں، یا سب کا خاتمہ کر ڈالا ہے؟ ‘

    مرجا- بڑا لتي آدمی ہے. جب آ جاتا ہے تو مجبور ہو کر مجھے کھیلنا ہی پڑتا ہے. بےگم- دتكار کیوں نہیں دیتے؟مرزا-برابر کا آدمی ہے، عمر میں، درجے میں، مجھ سے دو اگلے اونچے، ملاهجا کرنا ہی پڑتا ہے. بیگم-تو میں ہی دتكار دیتی ہوں. ناراض ہو جائیں گے، ہو جائیں. کون کس کی روٹیاں چلا دیتا ہے. ملکہ روٹھےگي، اپنا سہاگ لیں گی. هريا، باہر سے شطرنج اٹھا لی. میر صاحب سے کہنا، میاں اب نہ کھیلے گی، آپ تشریف لے جائیے.

    مرزا-ہاں، کہیں ایسا غضب بھی نہ کرنا. بیگم جانے کیوں نہیں دیتے؟ میرے خون پیئے، جو اسے روکے. اچھا اسے روکا، مجھے روکو تو جانوں. یہ کہہ کر بیگم ساهبا جھللاي ہوئی دیوان خانے کی طرف چلیں. مرزا بیچارے کا رنگ اڑ گیا. بیوی کی منتیں کرنے لگے، ‘خدا کے لئے، آپ کو حضرت حسین کی قسم. میری ہی میت دیکھے، جو ادھر جائے. ‘لیکن بیگم نے ایک نہ مانی. دیوان خانے کے دروازے تک چلی گئیں. پر اچانک پر مرد کے سامنے جاتے ہوئے پاؤں mesmerizing ہے سے گئے. اندر جھانکا، اتفاق سے کمرہ خالی تھا. میر صاحب نے دو ایک مہرے ادھر ادھر کر دیے تھے اور اپنی صفائی بتانے کے لئے باہر ٹل رہے تھے. پھر کیا تھا، بیگم نے اندر پہنچ کر بازی الٹ دی. مہرے کچھ تخت کے نیچے پھینک دیا، کچھ باہر اور کواڑ اندر سے بند کر کنڈی لگا دی. میر صاحب دروازے پر تو تھے ہی، مہریں باہر پھینکے جاتے دیکھ، چوڑیوں کی جھنك بھی کان میں پڑی. پھر دروازہ بند ہوا تو سمجھ گئے بیگم ساهبا بگڑ گئیں. گھر کی راہ لی.

    مرزا نے کہا، تم نے غضب کیا. بےگم- اب، میر صاحب ادھر آئے تو کھڑے کھڑے نکلوا دوں گی. آپ تو شطرنج کھیلیں اور میں یہیں چولہے چکی کی فکر میں سر كھپاو. بولے، جاتے ہو حکیم صاحب کے یہاں کہ اب بھی تاممل ہے؟ مرزا گھر سے نکلے تو حکیم کے گھر جانے کے بدلے میر صاحب کے گھر پہنچے اور سارا ورتات کہا.

    مرزا-ٹھیک ہے، یہ تو بتائیے اب کہاں ترتیبات گے؟ میر-اس کا کیا گم؟ اتنا بڑا گھر پڑا ہوا ہے؟ جب گھر میں بیٹھا رہتا تھا تب تو وہ اتنا بگڑتی تھیں، یہاں ملاقات کریں گے تو شاید زندہ نہ چھوڑےگي. میر صاحب کی بیگم نے کسی نامعلوم وجہ سے ان کا گھر سے دور رہنا ہی مناسب سمجھتی تھیں. لہذا وہ ان شطرنج-محبت کی کبھی تنقید نہ کرتیں بلکہ کبھی کبھی میر صاحب کو دیر ہو جاتی تو یاد دلا دیتی تھیں. ان وجوہات سے میر صاحب کو برم ہو گیا تھا کہ میری عورت انتہائی ونيشيل اور سنگین ہے. لیکن جب دیوان خانے میں بساط بچھنے لگی، اور میر صاحب دن بھر گھر میں رہنے لگے تو انہیں بڑا تکلیف ہونے لگا. ان آزادی کی راہ میں رکاوٹ پڑ گئی.

    ریاست میں ہاہاکار مچا ہوا تھا. لوگوں دن دہاڑے لوٹی جاتی تھی. دیہاتوں کی ساری دولت لکھنؤ میں كھچي چلی آتی تھی، اور وہ طوائف میں، بھاڈو میں ولاستا کے دیگر اعضاء کی تکمیل میں اڑ جاتی تھی. اگرےجي کمپنی کے قرض دن پر دن بڑھتا جاتا تھا. رےجيڈےٹ بار بار انتباہ دیتا تھا، یہاں تو لوگ عیش و آرام کے نشے میں چور تھے. کسی کے کانوں پر جوں نہ رینگتی تھی.

    ٹھیک ہے، میر صاحب کے دیوان خانے میں شطرنج ہوتے کئی ماہ گزر گئے. نئے نئے نقشے حل کئے جاتے. تو میں-میں تک کی نوبت آ جاتی. پر جلد ہی دونوں میں میل ہو جاتا. کبھی کبھی ایسا بھی ہوتا کہ بازی اٹھا دی جاتی، مرزا جی خفا اپنے گھر چلے جاتے، میر صاحب اپنے گھر میں بیٹھ. پر رات بھر کی dormancy کے ساتھ سارہ کشیدگی پرسکون ہو جاتا تھا. صبح دونوں دوست دیوان خانے میں آ پہنچتے تھے.

    ایک دن دونوں دوست شطرنج کی دلدل میں غوطے کھا رہے تھے کہ اتنے میں گھوڑے پر سوار ایک بادشاہی فوج کا افسر میر صاحب کا نام پوچھتا آ پہنچا. میر صاحب کے ہوش اڑ گئے. یہ کیا بلا سر پر آئی؟ اس طلبی کس لئے ہوئی؟گھر کے دروازے بند کر لئے. نوکر سے کہا، کہہ دو، گھر میں نہیں ہے.

    سوار گھر میں نہیں، تو کہاں ہیں؟ نوكر- یہ میں نہیں جانتا. کہاں ہیں؟

    سوار- کام تجھے کیا بتلاو؟ حضور میں طلبی، شاید فوج کے لئے کچھ سپاہی مانگے گئے ہیں. جاگیردار ہیں کہ دل لگی؟ مورچے پر جانا پڑے گا تو آٹے دال کا بھاؤ معلوم ہو جائے گا. نوكر- اچھا تو جائیے، کہہ دیا جائے گا. سوار- کہنے کی بات نہیں. کل میں خود آؤں گا. ساتھ لے جانے کا حکم ہوا ہے. سوار چلا گیا. میر صاحب کی روح کانپ اٹھی. مرزا جی سے بولے، کہیے جناب، اب کیا ہو گا؟ مرزا بڑی مصیبت ہے. کہیں میری بھی طلبی نہ ہو. میر-کم بخت کل آنے کی کہہ گیا ہے. مرجا- کہیں مورچے پر جانا پڑتا تو بےموت مرے. میر-بس، یہی ایک تدبیر ہے کہ گھر پر ہمارے ساتھ چلیے ہی نہیں کل سے گومتی پر کہیں ویرانے میں نقشہ منجمد. دیکھیں کسے خبر ہو گی؟

    دوسرے دن دونوں دوست منہ-اندھیرے نکل کھڑے ہوتے. اگلے ایک چھوٹی سی دری دبائے، ٹوکری میں گلوريا بھرے، گومتی پار کر ایک پرانی ویران مسجد سے چلے جاتے، جسے شاید نواب اسپھددولا نے بنوایا تھا. راستے میں تمباکو، چلم اور مدريا لے لیتے اور مسجد میں پہنچ، دری بچھا، ہککی بھر، شطرنج کھیلنے بیٹھ جاتے تھے. پھر انہیں دین دنیا کی فکر نہ رہتی تھی. ‘قسط’ ایندھن ‘وغیرہ دو ایک الفاظ کے سوا منہ سے اور کوئی جملہ نہیں نکلتا تھا.کوئی یوگی بھی ٹرانس میں اتنا تقارب نہ ہوتا. دوپہر کو جب بھوک معلوم ہوتی تو دونوں دوست کسی بیکر کی دکان پر جاکر کھانا کھا آتے اور ایک چلم حقہ پی کر پھر ء-علاقے میں ڈٹ جاتے کبھی کبھی انہیں کھانا بھی خیال نہ رہتا تھا.

    ادھر ملک کی سیاست حالت شدید ہوتی جا رہی تھی. کمپنی کی فوجیں لکھنؤ کی طرف بڑھی چلی آتی تھیں. شہر میں ہلچل مچی ہوئی تھی. پر ہمارے دونوں کھلاڑیوں کو اس ذرا بھی فکر نہ تھی. وہ گھر سے آتے تو گلیوں میں سے ہوکر. ڈر تھا کہ کہیں کسی بادشاہی ملازم کی نگاہ نہ پڑ جائے، نہیں تو بیگار میں پکڑے جائیں.

    ایک دن دونوں دوست مسجد کے کھنڈرات میں بیٹھے ہوئے شطرنج کھیل رہے تھے. مرزا کی بازی کچھ کمزور تھی.میر صاحب انہیں قسط پر قسط دے رہے تھے. اتنے میں کمپنی کے فوجی آتے ہوئے دکھائی دیے. اس گوروں کی فوج تھی جو لکھنؤ پر حق جمانے کے لیے آ رہی تھی. میر صاحب بولے، اگرےجي فوج آ رہی ہے خدا خیر کرے.مرزا-آنے دیجئے، قسط بچائیے. لو یہ قسط! میر ذرا دیکھنا چاہئے؛ یہیں آڑ میں کھڑے ہو جائیں. مرزا-دیکھ لیجیئے گا، جلدی کیا ہے، پھر قسط! مير- آرٹلری بھی ہے. کوئی پانچ ہزار آدمی ہوں گے. کس طرح جوان ہیں. لال بندروں سے منہ ہیں. صورت دیکھ کر خوف ہوتا ہے. آپ بھی عجیب آدمی ہیں. یہاں تو شہر پر آفت آئی ہوئی ہے اور آپ کو قسط کی سوجھی ہے. کچھ اس کی خبر ہے کہ شہر گھر گیا تو گھر کس طرح چلایا جائے گا؟

    مرزا جب چلنے کا وقت آئے گا تو دیکھا جائے گا، اس قسط، صرف اب کی طرف سے ایندھن میں شکست ہے. فوج نکل پھر بازی بچھ گئی. مرزا بولے آج کھانے کی کیسی ٹھہرے گی؟ میر-اجی، آج تو روزا ہے. کیا آپ کو بھوک زیادہ معلوم ہوتی ہے؟ مرجا- جی نہیں. شہر میں جانے کیا ہو رہا ہے؟ مير- شہر میں کچھ نہ ہو رہا ہو گا.

    دونوں شریف آدمی پھر جو کھیلنے بیٹھے تو تین بج گئے. اب مرزا کی بازی کمزور تھی. چار خطرے کی گھنٹی بج رہا تھا کہ فوج کی واپسی کی آہٹ ملی. نواب واجدلي شاہ پکڑ لئے تھے اور فوج انہیں کسی نامعلوم مقام کو جا رہی تھی. آج تک کسی خود مختار ملک کے بادشاہ کی شکست اتنی امن سے، اس طرح خون بہے بغیر نہ ہوئی ہوگی. اودھ کے وسیع ملک کا نواب قیدی بنا جاتا تھا اور لکھنؤ راھ کی نیند میں مست تھا. یہ سیاسی ادھپتن کے انتہائی حد تھی.مرزا نے کہا، حضور نواب کو ظالموں نے قید کر لیا ہے. مير- گے، یہ جمع ایندھن. مرجا- جناب، ذرا ٹھہرئیے، اس وقت ادھر طبیعت نہیں لگتی. بیچارے نواب صاحب اس وقت خون کے آنسو رو رہے ہوں گے. مير- پکارا ہی چاہیں، یہ راھ دیکھیں مل نصیب ہوگا؟ اس قسط. مرجا- کسی کے دن برابر نہیں جاتے. مير- جی ہاں، سو تو ہے ہی، یہ لو پھر قسط! بس اب کی قسط میں شکست ہے. بچ نہیں سکتے. مرزا-خدا کی قسم، آپ بڑے بیدرد ہیں. اتنا حادثہ دیکھ کر بھی آپ کو دکھ نہیں ہوتا. ہیلو، غریب واجدلي شاہ! میر-پہلے اپنے بادشاہ کو تو بچائیے، پھر نواب کا ماتم کیجئے گا.اس قسط اور شکست. لگانا ہاتھ.

    بادشاہ کو لئے ہوئے فوج سامنے سے نکل گئی. ان کے جاتے ہی مرزا نے پھر بازی بچھا لی. ہار کی چوٹ بری ہوتی ہے. میر نے کہا، آئیے! نواب کے ماتمی لباس میں ایک مرثیہ کہہ ڈالیں. لیکن مرزا کی راجيبھكت اپنی ہار کے ساتھ ختم ہو چکی تھی. وہ شکست کا بدلہ ادا کرنے کے لئے بے چین ہو گئے تھے.

    شام ہو گئی. دونوں کھلاڑی ڈٹے ہوئے تھے. گویا دونوں خون کے پیاسے سورما آپس میں لڑ رہے ہوں. مرزا جی تین باجيا مسلسل ہار چکے تھے. اس چوتھی بازی کا رنگ بھی اچھا نہ تھا. وہ بار بار جیتنے کا درڑھنشچي کر سنبھل کر کھیلتے تھے لیکن ایک نہ ایک چال امورفووس آ پڑتی تھی، جس بازی خراب ہو جاتی تھی. ہر بار ہار کے ساتھ عذاب کا احساس اور غصے ہوتی جاتی تھی. ادھر میر صاحب ہلاک امنگ کے گجلے گاتے تھے؛ چٹكيا لیتے تھے، گویا کوئی خفیہ فنڈز پا گئے ہوں.

    جوں جوں بازی کمزور پڑتی تھی، صبر ہاتھ سے نکلتا جاتا تھا. یہاں تک کہ وہ بات بات پر جھجھلانے لگے. ‘جناب، آپ کی چالوں نہ بدلا کرو. یہ کیا کہ چال چلے اور پھر اسے تبدیل کر دیا. یہ آپ مہرے پر ہی کیوں ہاتھ رکھے رہتے ہیں. مہرے چھوڑ دیجئے. جب تک آپ کو چال نہ سوجھے، مہر چھے ہی نہیں. آپ ایک ایک چال آدھ آدھ گھنٹے میں چلتے ہیں. اس سند نہیں. جس ایک چال چلنے میں پانچ منٹ سے زیادہ لگے اس شکست سمجھی جائے. پھر آپ نے بات بدلی؟ چپکے سے مهرا وہیں رکھ دیجئے. میر صاحب کا فرضی پٹتا تھا، بولے میں نے چال چلی ہی کب تھی؟مرزا-اپ़ منتقل چکے ہیں. مهرا وہیں رکھ دیجئے-اسی گھر میں. میر-اس میں کیوں رکھوں؟ مرجا- فرضی پٹتے دیکھا تو دھاندلی کرنے لگے. میر-دھاندلی آپ کرتے ہیں. دھاندلی سے کوئی نہیں جیت. مرجا- تو اس بازی میں آپ شکست ہو گئی. مير- مجھے کیوں شکست ہونے لگی؟ مرجا- آپ کو مهرا اسی گھر میں رکھ دیجئے، جہاں پہلے رکھا تھا.

    تکرار بڑھنے لگی. دونوں اپنی اپنی ٹیک پر اڑے تھے. مرزا بولے کسی نے خاندان میں شطرنج کھیلی ہوتی تب تو اس قائد جانتے. وہ تو ہمیشہ گھاس چھيلا کئے، آپ کو شطرنج کیا كھےلےگا. جاگیر مل جانے ہی سے کوئی رئیس نہیں ہو جاتا. میر-کیا! گھاس آپ اباجان کرچھیلتے ہوں گے. یہاں تو نسلوں سے شطرنج کھیلنے چلے آتے ہیں. مرجا- اجی جائیے بھی، گاجيددين حیدر کے یہاں شیف کام کرتے کرتے عمر گزر گئی. آج رئیس بننے چلے ہیں. مير- کیا اپنے بزرگوں پر سیاہی لگاتے ہو، وہ ہی شیف کا کام کرتے ہوں گے. یہاں تو ہمیشہ بادشاہ کے دستركھوان پر کھانا کھاتے چلے آئے ہیں. مرجا- ارے چل چركٹے، بہت بڑھ کر باتیں نہ کر! میر-کی زبان سبھالے، ورنہ برا ہوگا. میں ایسی باتیں سننے کا عادی نہیں ہوں. یہاں تو کسی نے آنکھیں دكھاي کہ اس کی آنکھیں نکالی ہے. ہے حوصلہ؟ مرزا-آپ میرا حوصلہ دیکھنا چاہتے ہیں، تو پھر آئیے، آج دو دو ہاتھ ہو جائیں، ادھر یا ادھر.
    میری خاطر خواہ بیگم اردوكے خلاف تھی تو ہم نے اردو مےگےذين منوانا باندھ کر دیا تو یہ باتیں آپ کے آگے اشكرا کردیا.

    خود حافظ

आपके जैसे दोस्तों मेरा होसला बढ़ाते हो .मै जो कुछ हु, ये आपके जैसे दोस्तोकी बदोलत हु, .......आता अताई

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: